اب تیرا کیا ہو مودیا ---

اب ہونا کیا ہے؟ ان شاءاللہ اب ہونا یہ ہے کہ انڈیا کو ملنا ہے ڈنڈا. کبھی نیتین یاہو کی گود میں بیٹھنا کبھی اوباما اور اب ٹرمپ کی لیکن ان دونوں ممالک نے انڈیا کو صرف استعمال کیا ہے اسکے علاوہ انڈیا سے انکو کوئی غرض نہیں.امریکہ نے جب ایشاء کا رخ کیا تھا تو اسے ایک ایسے حلیف کی ضرورت تھی جو کہ یہاں امریکہ کے مفادات کا تحفظ کرسکے.جبکہ دوسری طرف اسرائیل کا بھی کچھ یہی ارادہ تھا لیکن اس کی وجہ صرف پاکستان تھا کہ کسی طرح پاکستان کو انگیج کرکے کنٹرول میں رکھا جاسکے.


امریکہ کی خواہش یہ بھی تھی کہ حلیف میں یہ خوبی بھی ہو کہ اسے چین اور روس کے خلاف بھی استعمال کیا جاسکے تو ظاہر ہے پھر ایک انڈیا ہی ایک اچھا آپشن تھا۔ دُنیا کا سب سے جاہل ملک بھارت اور خاص کر مود ی سرکار نے تو پچھلے 4 سال صرف امریکہ اور اسرائیل کی خوشامد ہی کیے رکھی۔

ان دونوں ممالک نے بھی انڈیا کو خوب لوٹا اور اپنا خوب اسلحہ بیچا۔ اب جب امریکہ افغانستان سے واپس جانے کی تگ و دو میں ہے تو انڈیا کو یکسر فراموش کردیا کہ جس انڈیا کو گھسیٹ کے افغانستان میں لایا اب اُسکا کیا ہوگا۔ لیکن اب ایسا نہیں رہاکچھ انڈیا کی دوغلی پالیسی کبھی امریکہ کبھی رُوس اور سب سے بڑی بات کے انڈیا کو سر پہ بٹھانے کے باوجود بھی امریکہ کو افغانستا ن میں انڈیا سے کوئی سپورٹ نہ مل سکی نہ افغان جنگ میں۔

نہ ہی پاکستان اور چائینہ کے خلاف انڈیا کا کوئی بھی پروپگنڈہ تیر بہدف ثابت ہوا ۔ امریکہ اپنی جان بچا کے نکل رہا ہے اورانڈیا کا رُونا دھونا پورے زورشور سے جاری ہے۔ امریکی کی جانب سے انڈیا کو پنٹاگون میں ایک خاص مقام دیا گیا تھا جہاں انڈیا کو اپنا آفس دیاگیا تھا جہاں 7 سے 8 انڈین افیشل مقیم تھے مگر چنددن پہلے انہیں پینٹاگون سے نکال کر 12 کلومیٹر دوری ایک بلڈنگ میں شفٹ کردیا گیا۔ اسرائیل انڈیا کو پاکستان کے خلاف بڑی بےرحمی سے استعمال کرتا آیا ہےاور کررہاہے اس حوالے سے انڈیا کو جدید اسلحے سے بھی لیس کرتا رہا ہے۔ مگر الحمدللہ مودی نے جو انڈیا کی منجھی ٹھوکی اور دوسری طرف بچگانہ حرکتوں کا سہارا لیے صبح وشام اپنی ہر ناکامی کا سبب پاکستان کو بتاتے اب انڈیا اسرائیل کے لیے بھی وہ ریاست نہیں رہی جس کی انہوں نے توقع کی تھی۔

جہاں تک یہ تنیوں پاکستان کے خلاف سازشیں کرتے رہے ہماری پاک فوج اور ہمارے دفاع کی آخری لکیر آئی ایس آئی نے انہیں منہ توڑ جواب دیا اسرائیل بھی جان چکا ہے کہ اب یہاں دال نہیں گلنے والی اس لیے اسرائیل انڈیا کو مزید مہلت دینا اور انکی بچگانہ حرکتیں برداشت نہیں کرے گا۔ جلدہی امریکہ کی طرح اسرائیل بھی انڈیا سے اپنا ہاتھ کھینچ لے گا۔ اب پیچھے رہ جائے گا انڈیا اکیلا، افغانستان میں طالبان ویسے ہی انڈیا کے سخت مخالف ہیں کشمیر میں آزادی کی تحریک ہو یا انڈیاکے اندر اپنی تحریکیں ہو وہ اب کچھ ہی وقت میں پوری قوت سے سر اٹھائیں گی۔امریکی ایماء پہ چائینہ سے روز کی تو تو میں میں اور اسرائیل کی خوشنودی کے لیے پاکستان کوآنکھیں دکھانایہ سب کچھ اب انڈیا کو ایک گھناؤنا خواب لگنے والا ہے۔ نہ امریکہ مدد کو آئے گا نہ اب اسرائیل۔

امریکی معیشت کا جو جنازہ نکل رہا ہے کچھ ہی وقت میں امریکہ میں بھی آزادی کی تحریکں سراٹھا رہی ہیں اور امریکہ اب کسی بھی ایڈوینچر کا متحمل نہیں ہوسکتا۔ اسرائیل اب پاکستان سے دُور رہنا اور اپنا مزید وقت اور پیسہ انڈیا پر برباد کرنےکی بجائے عربوں کی طرف توجہ دے گا۔ صرف انڈیا رہ جائے گا اور بس انڈیا رہ جائے گا مقابلے میں پاکستان، چین ،افغان طالبان ان شاءاللہ اس شیطان ریاست کا انجام قریب ہے۔ مودی کا بھلا ہو اپنے ہی ملک کا ستیاناس کرنے کےلیے۔ لکھنے بیٹھوں تو سب کھول کے لکھ دوں لیکن چلیں چند موٹی موٹی باتیں سمجھادیں.