ایشین چمپیئنز لیگ فٹ بال:فائنل میں ایرانی خواتین کو شرکت کی اجازت

ایران میں ہونے والے ایشین چمپیئنز لیگ فٹ بال کے فائنل میں سیکڑوں خواتین کو شرکت کی اجازت دے دی گئی۔

رپورٹ کے مطابق اس فیصلے کو 35 برس سے خواتین کو اہم میچوں سے باہر کرنے کے فیصلے کے خاتمے کے طور پر دیکھا جارہا ہے۔

ایران کی ٹیم کی پرسیپولیس اور جاپان کی کاشیما اینٹلرز کے درمیان اس میچ میں اطلاعات کے مطابق اکثر کھلاڑیوں کی رشہ دار خواتین یا خواتین ٹیموں کے ارکان شریک ہوں گی۔

خیال رہے فٹ بال کی عالمی تنظیم فیفا بھی ایران میں خواتین پر عائد اس پابندی کے خاتمے کے لیے حکام سے مذاکرات کررہی ہے۔

قبل ازیں گزشتہ ماہ 100 خواتین کو ایران اور بولیویا کے درمیان ایک دوستانہ میچ دیکھنے کی اجازت دی گئی تھی تاہم فوری بعد پابندی کا بحال کر دیا گیا تھا۔

ایران حکام کی جانب سے رواں سال مارچ میں 35 خواتین کو مقامی ٹیموں پرسپولیس اور استقلال کے درمیان میچ دیکھنے کی کوشش کے دوران گرفتار کر لیا گیا تھا۔

مذکورہ میچ میں فیفا کے صدر گیانی انفینٹینو بھی موجود تھے جہاں ایرانی وزیر کھیل مسعود بھی موجود تھے۔

ایرانی خواتین اور لڑکیوں پر 1981 میں مردوں کے کھیلوں میں شرکت پر پابندی عائد کی گئی تھی تاہم دیگر ممالک کی خواتین کو ان میچوں میں شرکت کی اجازت دی جاتی رہی ہے۔

غیرملکی خبر ایجنسی کے مطابق ایران میں کھیلوں کے میدانوں تک خواتین کی رسائی کے لیے مہم چلانے والے ایک گروپ کی جانب سے 2 لاکھ سے زائد افراد کے دستخط شدہ پٹیشن فیفا کو جمع کرادی تھی۔

اس گروپ کے ترجمان کا کہنا تھا کہ اس پابندی کا خاتمہ ہمارا دہائیوں سے خواب رہا ہے اور ہمیں بھی عوامی خوشیوں اور جوش و جذبے سے محروم کیا گیا تھا۔

آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎

?>