نئے پاکستان کی سو روزہ کارکردگی، کیا کھویا کیا پایا؟ تفصیل جان کر آپ بھی حیران رہ جایئں گے

پاکستان تحریک انصاف کافی عرصے سے تبدیلی کا نعرا بلند کیے ہوۓ ہے لیکن اس ضمن میں انہوں نے اقتدار حاصل کرنے کے بعد سو روز میں کیا کارکردگی دکھائی اس کے متعلق چند حقائق آپکے سامنے پیش خدمت ہیں.


سو دن کی دوڑ میں مراد سعید سب سے آگے ہیں جن کی تعریف عمران خان صاحب نے بھی کی ہے.ان کے کارناموں میں پوسٹل سروس کی بہتری ،اور نئے سفری پورٹل کا اجرا ء شامل ہے.

اس کے بعد شیخ رشید کا نمبر آتا ہے ان کے کھاتے میں دو ارب کے خسارے میں کمی اور دس نئی ٹرینوں کا اجراء شامل ہے.

اسی طرح شاہ محمود قریشی کے پلڑے میں سرکاری دورے اور اقوام متحدہ میں خطاب کو ڈال دیا گیا ہے.

وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی کی کارکردگی کو بھی بہت سرایا جا رہا ہے.

اسد عمر کو بھی بہترین کارکردگی پر شاباش مل رہی ہے کیونکہ انہوں نے بہت کامیاب مذاکرات کئے اور پاکستان کو قرضہ ملا.

فیصل واڈا اور چوہدری فواد کو بھی سراہا گیا ہے ۔ان وزراء کے علاوہ کسی کی خاطر خواہ کارکردگی کا ذکر ہی نہیں.

اعظم سواتی نے تاہم اپنی شاہانہ وزارت کے لئے غریب کی گائے تک اپنے محل کی زینت بنا لی ۔

اس کے علاوہ سو روزہ کارکردگی میں  کسی گورنر کسی وزیر اعلٰی اور کسی صوبائی وزیر کا ذکر تک نہیں.

کرپشن میں کمی اور کرپشن پر کنٹرول کی کوشش بہت خوب رہی,بچت کی کوشش اچھی لیکن عمران خان اور چند ایک وزیروں کے علاوہ سبھی پروٹوکول کے دلدادہ نظر آے.خصوصاً وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار نے حال ہی میں وسیع پروٹوکول کا شاندار مظاہرہ کیا.

اصل مسئلہ یہ ہے کہ عوام کو کیا ریلیف ملا....پٹرول مہنگا ہوا جبکہ پوری دنیا میں یہ سستی ترین سطح پر آیا ہوا ہے.اسی طرح فیول ایڈجسٹمنٹ کی مد میں بجلی بھی مہنگی کر دی گئی.

پرائیویٹ سکول، کالج،یونیورسٹیاں ،میڈیکل کالجز اور اکیڈمی مافیا کسی نے ان کا نہیں سوچا..پولیس پر کوئی ایکشن اور پالیسی مرتب نہیں ہوئی.

مہنگائی زورں پر ہے ۔قرضوں کا حصول ضروری ضروری ہے کیوں کے خزانہ خالی ہو چکا.

لیکن اس ساری صورت حال  میں عوام سے صبر کی تلقین کی جا رہی ہے کہ وہ دن دور نہیں جب نئے پاکستان میں میں ایسا سورج طلوع ہوگا جو مسائل کے تمام اندھیروں کو اپنی روشنی سے منور کر دے گا.



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎