سابق چئیرمین نجم سیٹھی کے پاکستان کرکٹ سے متعلق انکشافات

سابق چیئرمین پی سی بی نجم سیٹھی نے کہا ہے کہ 35 پنکچر کے الزام کے بعد پی سی بی آنے پرپچھتایا،سابق وزیراعظم نوازشریف نے کہا تھا کہ عہدہ نہ چھوڑیں اب یہ ہمارا مسئلہ ہے۔کرکٹ کمیٹی میں سفارشی ٹولہ بیٹھا ہوا ہے۔


سماء کے نمائندے نعیم اشرف بٹ کو انٹرویو دیتے ہوئے نجم سیٹھی نے انکشاف کیا کہ کرکٹ میں لابی سسٹم ہے اور نوکریوں کے لیے لاہوراور کراچی میں تعصب ہے،یہ کرکٹ کی بدقستی ہے اور اس کی تردید نہیں کی جاسکتی۔

انھوں نے بتایا کہ سابق کپتان راشدلطیف نے پی سی بی میں چیف سلیکٹرکی پیش کش پرکہا کہ اینٹی کرپشن کا ہیڈ بنائیں،تاہم دانش کنیریا کی حمایت پر راشد لطیف کوعہدہ نہیں دیا،بعد میں ثابت ہوا کہ یہ فیصلہ درست تھا کیوں کہ کنیریا نے اپنی غلطی تسلیم کرلی۔

محسن خان سے متعلق انھوں نے بتایا کہ سابق اوپنر نے پاکستان کرکٹ کے کوچ یا سلیکٹربنانے کی درخواست کی لیکن لوگوں نےمنع کیا کہ یہ بندہ صحیح نہیں ہے۔ یہ بھی بعد میں درست ثابت ہوا کیوں کہ محسن خان پہلے وسیم اکرم کو گالیاں دیتے تھے اور اب کرکٹ کمیٹی میں ان کے ساتھ ہی بیٹھے ہوئے ہیں۔محسن حسن خان کہتے ہیں کہ مشکوک ریکارڈ رکھنے والے کھلاڑیوں سے متعلق احسان مانی نے ان کا ذہن صاف کردیا ہے۔ نجم سیٹھی نے مزید کہا کہ کرکٹ کمیٹی میں سفارشی ٹولہ بیٹھا ہے۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎