جنرل باجوہ نے مجھےیقین دہانی کروائی ہے کہ وہ ۔۔۔عمران خان نے واضح اعلان کردیا

وزیراعظم عمرا ن خان نے کہاہے کہ مجھے فوج نے جنرل قمر جاوید باجوہ نے یقین دہانی کروائی ہے کہ وہ لاپتہ افراد کے معاملے پر ہر قسم کی مدد کرنا چاہتے ہیں ، جنرل باجوہ کی سٹیبلشمنٹ مکمل طور پر حکومت کے ساتھ کھڑ ی ہے ، ایک بھی فیصلہ نہیں ہے جو میں نے نہیں کیا۔


وزیراعظم عمران خان نے صحافیوں کو خصوصی انٹروی دیاجس میں انہوں نے گفتگو کرتےہو ئے کہا سکیورٹی کے معاملات پر اسٹیبلشمنٹ سے مدد لینا پڑتی ہے ، جب بھی سکیورٹی کی بات ہوگی تو اسٹیبلشمنٹ کا رول اہم ہوگا ، سیکورٹی کے معاملات میں ان کی رائے ضرور لی جاتی ہے اور ساری دنیا لیتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ جنرل ضیاء، جنرل مشرف اور جنرل باجوہ کی سٹیبلشمنٹ میں فرق ہے ، جنرل باجوہ کی سٹیبلشمنٹ مکمل طور پر حکومت کے ساتھ کھڑ ی ہے ، ایک بھی فیصلہ نہیں ہے جو میں نے نہیں کیااور ایک بھی فیصلہ نہیں ہے کہ جس کے پیچھے فوج نہیں کھڑی ۔

انہوں نے کہا کہ مجھے جنرل باجوہ کی جانب سے پوری یقین دہانی ہے کہ وہ لاپتہ افراد کے معاملے پر ہر قسم کی مدد کرناچاہتے ہیں۔مسئلہ کشمیر کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ پاکستان اور بھارت کے درمیان مسائل حل کرنے کیلئے دوہی طریقے ہیں ، ایک جنگ اور ایک مذاکرات ہیں ، دو ایٹمی طاقتوں کے درمیان جنگ کا کوئی عقلمند آدمی تصور نہیں کرسکتا ، یہ مسئلہ مذاکرات سے ہی حل ہوگا ۔ واجپائی نے مجھے کہا تھا کہ مشرف کے دور میں ہم مسئلہ کشمیر کے حل کے قریب پہنچ گئے تھے ، اس کا مطلب یہ ہے کہ اس مسئلہ کاحل ہے ، ہندوستان میں الیکشن آرہے ہیں اور ان کا ایجنڈا اینٹی پاکستان ہے اور شاہ محمود قریشی کی گوگلی کا مقصد یہی ہوگا کہ کرتارپور والے معاملے کے بعد اور میری امن کی خواہش کی تقاریر کے بعد ان کیلئے پاکستان کے خلاف انڈیا میں پروپیگنڈا کرنا مشکل ہوجائے گا ۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎