عدالت نے پی ٹی آئی رہنما ڈاکٹر عامر لیاقت کے خلاف توہین عدالت کے مقدمے کا فیصلہ سنا دیا

سپریم کورٹ نے تو ہین عدالت کیس میں عامر لیاقت کی معافی قبول کرتے ہوئے ان کے خلاف توہین عدالت کا مقدمہ نمٹا دیا ہے۔


 پی ٹی آئی کے رکن قومی اسمبلی اینکر پرسن ڈاکٹرعامر لیاقت نے عدالت سے غیر مشروط معافی کی استدعا کی جس پر انکو عدالت کی طرف سے معاف کر دیا گیا.

 عدالت میں چیف جسٹس نے عامر لیاقت کی معافی پر ریمارکس دیے کہ ڈاکٹر صاحب آپ کے چہرے سے لگ نہیں رہا کہ آپ شرمندہ ہیں

جس پر عامر لیاقت نے جواب دیا کہ سر میں بہت شرمندہ ہوں، انتہائی عاجزی و انکساری سے اور جھک کر معافی مانگتا ہوں اس یقین کے ساتھ معافی مانگ رہا ہوں کہ اگر آئندہ ایسی کوئی بات ہو جائے تو عدالت بے شک مجھے معافی کا حق نہ دے. 

ڈاکٹر عامر کے یہ الفاظ سننے کے بعد چیف جسٹس نے ردعمل دیتے ہوۓ کہا کہ ویسے ڈاکٹرصاحب مقرر تو کافی اچھے ہیں جس پرکمرہ عدالت میں قہقوں سے گونج اٹھا اور عامر لیاقت نے عدالت سے کہا کہ میں میر شکیل اور میر ابراہیم سے بھی معافی مانگتا ہوں جس پر عدالت نے ان کو معاف کردیا. 



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎