امریکی شٹ ڈاؤن، ڈونلڈ ٹرمپ پر دباؤ بڑھ گیا، مقدمات درج

امریکا میں 22 روز سے جاری شٹ ڈاؤن کے باعث امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ پر سیاسی اور قانونی دباو بڑھنے لگا۔ وفاقی ملازمین کو تنخواہیں جاری نا کئے جانے پر کئی ایسوسی ایشنز نے ٹرمپ پر مقدمات کردیئے۔ روس کے لیے ممکنہ جاسوسی پر ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف ایف بی آئی بھی تحقیقات کررہی ہے۔


میکسیکو کی سرحد پر باڑ لگے گی یا نہیں۔ منصوبے کے لیے پانچ اعشاریہ سات بلین ڈالرز کی رقم کی منظوری پر ڈیمو کریٹس اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے درمیان تنازع نے آٹھ لاکھ وفاقی ملازمین کی حالت پتلی کردی ہے۔

امریکا میں بائیس روز سے جاری طویل ترین شٹ ڈاون کی وجہ سے وفاقی اداروں اور ایجنسیز کے ملازمین تنخواہوں سے محروم ہیں۔ ہوم لینڈ سیکیورٹی سمیت دیگر محکموں کے ملازمین نے صاف کہہ دیا کہ تنخواہ نہیں تو کام بھی نہیں۔ اس کے ساتھ ہی امریکی ائرپورٹس پر پروازوں کی آمد و رفت بھی معطل ہونا شروع ہوگئی ہے۔

تنخواہیں جاری نا کرنے پر نیشنل ائر ٹریفک کنٹرولرز ایسوسی ایشن سمیت دیگر ایسوسی ایشنز ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف دھڑا دھڑ مقدمات درج کروا رہی ہیں۔ دوسری طرف روس کے لیے ممکنہ جاسوسی کے الزام میں ایف بی آئی بھی امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے خلاف تحقیقات جاری ہیں۔

ایف بی آئی کو دوہزار سولہ کی انتخابی مہم کے دوران ڈونلڈ ٹرمپ کے روس کے ساتھ تعلقات پر شبہ ہے۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎