ہنڈرڈ انڈیکس میں560 پوائنٹس کی کمی، اوپن مارکیٹ میں ڈالر 50 پیسے مہنگا

پاکستان کا آئی ایم ایف سے رابطہ کرنا سرمایہ کاروں کو محتاط کرگیا، ہنڈرڈ انڈیکس میں پانچ سو ساٹھ پوائنٹس کی کمی ریکارڈ کی گئی سرمایہ کاروں کو چھیانوے ارب روپے ڈوب گئے، جبکہ انٹربینک میں ڈالر تیرپن پیسے اور اوپن مارکیٹ میں ڈالر پچاس پیسے تگڑا ہوگیا ۔


وزیر اعظم عمران خان کے دورہ دبئی میں آئی ایم ایف کی ایم ڈی سے ملاقات کے بعد یہ واضح ہوگیا کہ پاکستان آئی ایم ایف پروگرام میں جارہا ہے۔

اسٹاک مارکیٹ میں کاروبار کے اختتام پر 100 انڈیکس 560 پوائنٹس کمی سے 40 ہزار 326 کی سطح پر بند ہوا، شئیرز کی قیمت کم ہونے سے مارکیٹ کپیٹلائزیشن 96 ارب روپے کم ہوکر 8034ارب روپے ہوگئی ۔

دوسری جانب انٹربینک اور اوپن مارکیٹ میں روپیہ کمزور اور ڈالر تگڑا ہوگیا ، انٹربینک میں ڈالر 53 پیسے مہنگاہوکر 138 روپے 93 پیسے پر بند ہوا اور اوپن مارکیٹ میں بھی ڈالر 50 پیسے مہنگا ہوکر 139روپے 20 پیسے کا ہوگیا ۔

معاشی تجزیہ کار مزمل اسلم کا کہنا ہے کہ اس کا سرمایہ کاروں نے منفی اثر لیا ہے، جس کی وجہ سے اسٹاک مارکیٹ میں مندی کے رجحان ہے اور روپے پر بھی دباو دیکھا گیا۔

معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف سے قرضہ لیا تو پاکستان روپیہ مزید کمزور ہوسکتا ہے۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎