پاک افغان سرحدی گزرگاہوں پر چین جدید استقبالی مراکز تعمیر کرے گا

اسلام آباد — چین، پاکستان اور افغانستان کےدرمیان اہم سرحدی گزرگاہوں پر جدید استقبالیہ مراکز، پینے کے پانی اور کولڈ اسٹوریج کی سہولیات کی تعمیر کے لیے سرمایہ فراہم کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔


چین کے اس پراجیکٹ کا مقصد دونوں ملکوں کے درمیان روزانہ ہزاروں افراد کی آمد و رفت اور تجارتی قافلوں میں آسانیاں پیدا کرنا ہے جس سے دو ہمسایہ ملکوں کے درمیان کشیدگی کم کرنے میں مدد مل سکے گی۔

بیجنگ کے دونوں ملکوں کے ساتھ اچھے سفارتی اور اقتصادی تعلقات ہیں اور وہ اسلام آباد اور کابل کے درمیان کشیدہ رابطوں کو بہتر بنانے کے لیے ان کی حوصلہ افزائی کر رہا ہے تاکہ افغان جنگ کے خاتمے کے لیے طالبان اور افغان حکومت کے درمیان کسی سیاسی سمجھوتے تک پہنچنے کے لیے یہ دونوں ملک مل کر کام کر سکیں۔

اسلام آباد میں چینی سفارت خانے کے ڈپٹی چیف مشن زہو لی جیان نے وائس آف امریکہ کے ایازگل کو ایک تفصیلی انٹرویو میں بتایا کہ کابل میں تین ملکوں کے وزرائے خارجہ کے اعلیٰ سطحی مذاكرات میں سرحدی گزرگاہوں کو ترقی دینے کے پر وگرام پر اتفاق ہوا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم ان منصوبوں کی حوصلہ افزائی کر رہے ہیں جو پاکستان اور افغانستان کے درمیان تعلقات کو بہتر بنانے میں مدد دے سکتے ہیں۔ اور بالآخر اس کے نتیجے میں افغانستان میں امن اور ترقی لانے میں مدد ملے گی۔

لی جیان نے بتایا کہ بیجنگ نے 2017 کے آخر میں دونوں ملکوں کے درمیان دہشت گردی کی روک تھام، اسٹریٹیجک نوعیت کی بات چیت اور حقیقی تعاون کو فروغ دینے کے لیے سہ ملکی مذاكرات کا آغاز کیا تھا۔

سرحدی گزرگاہوں پر جدید سہولتوں کی فراہمی کے اپنے منصوبے کی وضاحت کرتے ہوئے لی جیان نے بتایا کہ کولڈ اسٹویج کی سہولت دونوں ملکوں کے درمیان مصروف ترین بارڈر کراسنگ طورخم اور چمن میں فراہم کی جائے گی، جب کہ پانی کا منصوبہ شمالی وزیرستان کی گزرگاہ غلام خان خیل ٹرمینل میں لگایا جائے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ بڑی تعداد میں چھوٹے تاجر طورخم اور چمن کے راستے آتے جاتے ہیں۔ اگر ان مقامات پر کولڈ اسٹویج موجود ہوں تو وہ اپنے پھلوں کو محفوظ رکھنے کے لیے ان کا استعمال کر سکیں ہیں۔ اسی طرح سرحدی گزرگاہوں پر اگر بہتر استقبالی مراکز قائم ہوں اور وہاں پینے کے پانی کی سہولت بھی موجود ہو تو آنے جانے والوں کے لیے آسانیاں پیدا ہوں گی۔

سرکاری اندازوں کے مطابق افغانستان میں پیدا ہونے والے 90 فی صد پھلوں اور سبزیوں کا خریدار پاکستان ہے۔ اسلام آباد نے حال ہی میں افغانستان سے آنے والی سبزیوں اور پھلوں پر ریگولیٹری ڈیوٹی ختم کر دی گھی جس سے ایک اندازے کے مطابق 2018 میں پاکستان کے لیے افغان تجارت میں 30 فی صد تک اضافہ دیکھنے میں آیا۔

عہدے داروں کا کہنا ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان ہر روز لگ بھگ 60 ہزار افراد آتے جاتے ہیں۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎