ملک میں سب سے زیادہ تنخواہیں کس صوبائی اسمبلی کے ارکان کی ہیں؟

پنجاب اسمبلی کے اراکین نے اپنی تنخواہیں بڑھانے کے حوالے سے بل تو منظور کروا لیا لیکن دیگر صوبوں کے ارکان کتنی تنخواہیں لیتے ہیں اس کا بھی جائزہ لے لیتے ہیں۔


گزشتہ روز پنجاب اسمبلی کے اراکین نے تنخواہیں بڑھانے کا بل منظور کیا تھا جس کے مطابق ہر رکن اسمبلی تقریبا 2 لاکھ روپے ماہانہ تنخواہ وصول کرے گا جبکہ اسمبلی سیشن میں آنے اور دیگر مراعات اسکے علاوہ ہوں گی۔

پنجاب اسمبلی کی جانب سے تنخواہیں بڑھانے کے اقدام پر وزیراعظم عمران خان نے انتہائی مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اراکین اسمبلی، وزراء اور خصوصاً وزیراعلیٰ کی تنخواہوں اور مراعات میں اضافے کا فیصلہ انتاہئی مایوس کن ہے۔

پنجاب اسمبلی ارکان کی تنخواہیں بڑھانے پر وزیراعظم کا اظہارِ مایوسی

وزیراعظم کے بعد وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری اور وزیر اطلاعات پنجاب صمصام بخاری نے بھی عمران خان کے مؤقف کی حمایت کی۔

پنجاب اسمبلی ارکان کی تنخواہوں کے علاوہ اگر ہم دیگر صوبوں کے ارکان کی تنخواہیں دیکھیں تو ہمیں واضح فرق نظر آئے گا۔ بنیادی تنخواہ اور الاؤنسز کو ملا کر موازنہ کیا جائے تو ایک رکن قومی اسمبلی کی تنخواہ بلوچستان اسمبلی کے رکن سے انتہائی کم بنتی ہے۔ ایک رکن قومی اسمبلی ماہانہ 1 لاکھ 73 ہزار روپے وصول کرتا ہے جبکہ دیگر مراعات الگ ہیں۔

پنجاب اسمبلی اراکین کی تنخواہیں 2 لاکھ تک بڑھانے کا بل منظور

صوبوں کے ارکان کی تنخواہیں

ملک میں سب سے زیادہ تنخواہ بلوچستان اسمبلی کے ارکان کی ہے۔ ایک رکن الاؤنسز سمیت ماہانہ 4 لاکھ 40 ہزار روپے وصول کرتا ہے جبکہ دیگر مراعات الگ ہیں۔

دوسرے نمبر پر پنجاب اسمبلی کے ارکان ہیں جن کی تنخواہ 83 ہزار روپے سے بڑھا کر 1 لاکھ 95 ہزار روپے کر دی گئی ہے۔

تیسرے نمبر پر خیبر پختونخوا اسمبلی کے ارکان ہیں جنہیں ماہانہ تنخواہ 1 لاکھ 53 ہزار 800 روپے دی جاتی ہے۔

سب سے آخر میں سندھ اسمبلی کے ارکان کو ماہانہ 1 لاکھ 45 ہزار روپے تنخواہ دی جاتی ہے جو کہ باقی صوبوں کے ارکان سے کم ہے۔

صوبائی وزراء اعلیٰ

وزراء اعلیٰ میں بھی صوبہ بلوچستان سب سے آگے ہے۔ وزیراعلیٰ بلوچستان 6 لاکھ روپے، وزیراعلیٰ پنجاب 4 لاکھ 25 ہزار روپے، وزیراعلیٰ کے پی 2 لاکھ 90 ہزار روپے اور وزیراعلیٰ سندھ ماہانہ 2 لاکھ 45 ہزار روپے تنخواہ وصول کرتے ہیں۔

قومی و صوبائی اسمبلی کے اسپیکرز

اسپیکر قومی اسمبلی ماہانہ 2 لاکھ 16 ہزار روپے وصول کرتے ہیں جبکہ اسپیکر بلوچستان اسمبلی 6 لاکھ 18 ہزار روپے، اسپیکر پنجاب اسمبلی 2 لاکھ 60 ہزار روپے، اسپیکر سندھ اسمبلی 2 لاکھ 20 ہزار روپے اور اسپیکر کے پی اسمبلی 1 لاکھ 93 ہزار روپے وصول کرتے ہیں۔

اس کے علاوہ وفاقی وزراء، وزراء مملکت، صوبائی وزراء، قومی و صوبائی ڈپٹی اسپیکرز، خصوصی مشیران اور پارلیمانی سیکریٹریز کی تنخواہیں بھی لاکھوں میں ہیں۔ پنجاب اسمبلی کی جانب سے منظور کیے گئے بل پر ابھی گورنر پنجاب کے دستخط ہونا باقی ہیں۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎

مقبول ٹیگ‎‎‎