نیوزی لینڈ: حملہ آور کی بندوق پردرج عبارات کی تاریخ کیا ہے؟

نیوزی لینڈ میں مسجد پر حملہ آور کی بندوق پر درج عبارات ماضی کے ان واقعات سے وابستہ ہیں جن میں خلافت عثمانیہ اور دیگر طاقتوں کے درمیان جنگیں ہوئی۔


اس حوالے سے ترک کے چینل ٹی آر ٹی ورلڈ اور دیگر عالمی میڈیا نے بندوق پر درج عبارت کی تشریح کی ہے

خلافت عثمانیہ نے پہلی مرتبہ ویانا کا محاصرہ کیا تھا۔

ویانا کے حصول کے لیے خلافتہ عثمانیہ اور عیسائی فوجوں کے مابین دوسری بڑی جنگ ہوئی تھی۔

بندوق پر درج نمبر 14 ان چودہ الفاظ کی جانب اشارہ تھا جو سفید فام انتہا پسند کا منترا ہے۔ سفید فام انتہاپسندوں کا منترا یا نعرہ ایڈولف ہٹلر کی تحریرکردہ تصنیف "Mein Kampf." کی جانب اشارہ ہے۔ مذکورہ کتاب میں ہٹلر نے انکشاف کیا تھا وہ کس طرح یہودی مخالف ہوا اور ساتھ ہی جرمنی کے لیے سیاسی نظریہ اور ترقیاتی منصوبے کا زکر کیا۔

22اکتوبر2015 کو 21 سالہ اینٹون لنڈن پیٹرسن نے اسکول کے اندر تلوار سے حملہ کرکے دو ٹیچرز اور دو طالبعلموں کو قتل کردیا تھا۔ پولیس کے مطابق لنڈن پیٹرسن نسل پرستانہ نفرت میں مبتلا تھا۔

کینیڈا میں 29 جنوری 2017 کو الیگزینڈر بیسونیٹ نے مسجد پر حملہ کرکے 6 افراد کو قتل کردیا تھا۔ وزیراعظم نے حملے کو دہشت گردی قرار دی تھی تاہم عدالت نے دہشت گردی پر مشتمل شق شامل کیے بغیر قاتل کو عمر قید کی سزا سنائی۔

سکندر برگ البانیہ نے خلافت عثمانیہ میں 43-1423 کے درمیانی عرصے میں ملٹری کمانڈر تھا۔ بعدازاں اس نے خلافت عثمانیہ کے خلاف بغاوت شروع کردی تھی۔

انتونیو بریگڈن وینس کا فوجی افسر تھا جس نے معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ترک قیدیوں کو قتل کیا تھا۔ مورخین لکھتے ہیں کہ انتونیو بریگڈن نے ترک قیدیوں کے ناک، کان اور جسم کے دیگر اعضاء کاٹ کرانہیں قتل کیا۔ بعدازاں ترک فوجیوں نے بھی انتونیو بریگڈن کو اسی طرح موت دی تھی۔

چارلیس مارٹیل ریبلک وینس میں فوجی رہنما تھا۔ جس نے اسپین میں قائم خلافت بنوامیہ کے مسلمانوں کو (33-732) میں شکست دی تھی۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎

مقبول ٹیگ‎‎‎