کیا حکومت علیمہ خان کا نام ای سی ایل میں ڈالنے والی ہے؟

پنجاب اسمبلی میں قرارداد مسلم لیگ (ن) کی عظمی زاہد بخاری کی طرف سے جمع کرائی گئی — فوٹو:فائل


لاہور: وزیر اعظم عمران خان کی بہن علیمہ خان کے خلاف پنجاب اسمبلی میں قرارداد جمع کرائی گئی ہے۔

پنجاب اسمبلی میں قرارداد مسلم لیگ (ن) کی عظمیٰ زاہد بخاری کی طرف سے جمع کرائی گئی جس میں کہا گیا ہے کہ علیمہ خان کی نیوجرسی امریکا میں خریدی جائیدادوں کا انکشاف ہوا ہے، ٹیکس گوشواروں میں جائیدادوں کو چھپاناجرم ہے اور جائیدادیں علیمہ خان کے ذرائع آمدن سے مطابقت نہیں رکھتیں لہٰذا علیمہ خان سے تحقیقات کیلئے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) بنائی جائے اور ان کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) میں ڈالا جائے۔

وزیراعظم عمران خان کی بہن علیمہ خان کی بیرون ملک ایک اور جائیداد سامنے آ گئی

یاد رہے کہ گزشتہ روز وزیراعظم عمران خان کی بہن علیمہ خان کی ایک اور جائیداد کی تفصیلات سامنے آئی تھیں جس کے مطابق علیمہ خان امریکی ریاست نیو جرسی میں 4 منزلہ عمارت میں تین فلیٹوں کی مالک ہیں اور ان جائیداد کی موجودہ مالیت 30 لاکھ ڈالر یعنی 45 کروڑ روپے ہے۔

تفصیلات میں کہا گیا ہے کہ امریکا میں موجود یہ جائیداد علیمہ خان نے 2004 میں خریدی مگر جون 2017ء تک پاکستانی ٹیکس حکام کے سامنے ظاہر نہیں کی تھی۔

علیمہ خان کیس کا پس منظر

واضح رہے کہ دبئی میں پاکستانیوں کی جائیدادوں کے معاملے پر سپریم کورٹ کی ہدایت پر قائم کمیٹی نے 893 مالکان کو نوٹس بجھوائے تھے جن میں سے 450 افراد نے جائیدادوں کی ملکیت تسلیم کرلی تھی جب کہ 443 افراد نے اس حوالے سے کوئی جواب جمع نہیں کرایا تھا۔

بعدازاں اس قسم کی اطلاعات سامنے آئیں کہ وزیراعظم عمران خان کی ہمشیرہ علیمہ خان نے دبئی میں اپنی جائیدادوں کے حوالے سے ایف بی آر کو ٹیکس جمع کرا دیا ہے۔

رپورٹس کے مطابق انہوں نے دبئی میں اپنے پرتعیش فلیٹ 'دی لافٹس ایسٹ۔ 1406' کی 25 فیصد تخمینی مجموعی قیمت اور 25 فیصد جرمانے کی رقم ٹیکسوں کی مد میں جمع کروائی۔

بتایا جارہا ہے کہ علیمہ خان کی پراپرٹی کی مالیت تقریباً 7 کروڑ 40 لاکھ روپے ہے اور ان کا فلیٹ دبئی کے قلب میں برج خلیفہ سے متصل ہے جو انتہائی مہنگا علاقہ ہے۔

باخبر متعلقہ حکام کے مطابق ٹیکسوں اور جرمانے کی شکل میں علیمہ خان پر دُہرا جرمانہ عائد کیا گیا تھا اور ایف بی آر اور ایف آئی اے حکام سے معاملات طے کرنے کے لیے علیمہ خان کی قانونی ٹیم کو چار ہفتے لگے۔

اس پورے عمل سے واقف ایک سینئر افسر نے بتایا تھا کہ علیمہ خان کو بیرون ملک کاروبار کے حوالے سے متعلقہ حکام کے استفسار کا جواب دینا باقی ہے۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎