کیا نظام ہاضمہ کی خرابی جان لیوا بیماری کی نشانی ہے؟

کچھ بیماریاں ایسی بھی ہوتی ہیں جن کی کوئی نشانی نہیں ہوتی اور وہ اچانک نمودار ہوکر انسان کو ایک دم سے بیمار بنا دیتی ہیں۔


تاہم کچھ بیماریاں ایسی بھی ہیں جن کی آمد کا پتہ کچھ دیگر نشانیوں اور خرابیوں سے ہوجاتا ہے اور ایسی نشانیوں کو سمجھ کر درست وقت پر معالج سے رجوع کرنا ہی بہتر ہوتا ہے۔

نظام ہاضمہ کی خرابی اگرچہ کئی مسائل کی وجہ سے ہوتی ہے، تاہم یہ مسئلہ کبھی کبھار جان لیوا مرض کا آغاز بھی ثابت ہوتا ہے۔

امریکا میں ہونے والی ایک طویل تحقیق سے پتہ چلا کہ نظام ہاضمہ کی خرابی والے مرد حضرات میں جان لیوا مرض پروسٹیٹ کینسر کے ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔

جی ہاں، امریکا میں ہونے والی ایک تحقیق کے نتائج سے پتہ چلا کہ جن مرد حضرات کو نظام ہاضمہ، تیزابیت اور پاخانہ کرتے وقت جلن اور تکلیف جیسے مسائل کا سامنا رہتا ہے، ان میں پروسٹیسٹ کینسر کے ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ جن مرد حضرات کو ’کروہن ڈیسیز یا انفلیمیٹری باؤل ڈیسیز‘ ہوتی ہیں ان مرد حضرات میں پروسٹیٹ کینسر ہونے کے امکانات عام افراد کے مقابلے بڑھ جاتے ہیں۔

ماہرین کے مطابق نظامہ ہاضمے کی خرابیوں اور بیماریوں کا براہ راست تعلق پروسٹیٹ کینسر کے جراثیم پیدا کرنے والے مسائل سے ہے، جس وجہ سے ایسے افراد میں یہ مرض ہونے کے زیادہ امکانات ہوتے ہیں۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ ماہرین نے اس تحقیق پر 20 سال تک کام کیا اور تقریبا 10 ہزار افراد کی صحت کا تجزیہ کیا۔

رضاکاروں کے معائنے سے یہ بات سامنے آئی کہ جن مرد حضرات کو نظام ہاضمہ کے مسائل، بیماریاں یا خرابیاں ہوتی ہیں، ان میں پروسٹیٹ کینسر ہونے کے امکانات عام افراد کے مقابلے 5 فیصد زیادہ ہوتے ہیں۔

تاہم تحقیق میں یہ نہیں بتایا گیا کہ اگر نظام ہاضمہ کا مسئلہ خواتین کے ساتھ بھی ہو تو ان میں کینسر ہونے کے امکانات ہوتے ہیں یا نہیں؟



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎