حکومت کے ایک اور یوٹرن پر اپوزیشن کی تنقید

ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) اور دوسرے ہتھکنڈوں سے ارکان اسمبلی کو ہراساں کیا جارہا ہے، چیئرمین پیپلز پارٹی— فوٹو: اسکرین گریب


چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) اور دوسرے ہتھکنڈوں سے ارکان اسمبلی کو ہراساں کیا جارہا ہے لیکن اب دو ارکان اسمبلی کے نام ای سی ایل سے نکال کر حکومت نے اچھا یوٹرن لیا۔

خیال رہے کہ وفاقی کابینہ کے اجلاس میں ارکان قومی اسمبلی محسن داوڑ اورعلی وزیر کے نام فوری طور پر ای سی ایل سے نکالنے کا فیصلہ کیا گیا ہے اور اس سلسلے میں وزارت داخلہ کو ہدایات جاری کردی گئی ہیں۔

وفاقی کابینہ کی محسن داوڑ اور علی وزیر کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی ہدایت

دونوں ارکان قومی اسمبلی کو کچھ روز پہلے بیرون ملک جانے سے روک دیا گیا تھا۔

 

قومی اسمبلی سے خطاب میں بلاول بھٹو نے کہا کہ پیپلز پارٹی نے پنجاب اسمبلی اور سینیٹ سے جنوبی پنجاب صوبے کی قرارداد منظور کرائی تھی، حکومت جنوبی پنجاب کے معاملے پر سنجیدہ لگتی ہے۔

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ مہنگائی کے حوالے سے اپوزیشن لیڈر کی بات سے متفق ہوں، گیس ،پیٹرول ،بجلی، کھانے پینے کی اشیاء منہگی کر دی گئیں۔

انہوں نے کہا کہ جنوبی پنجاب کے حوالے سے پیپلز پارٹی نے عملی اقدامات کیے، حکومت نے جنوبی پنجاب صوبے کے حوالے سے100 دن کا وعدہ کیا تھا، حکومت نے اپنا وعدہ پورا نہیں کیا۔

صوبہ جنوبی پنجاب پی ٹی آئی کے دورحکومت ہی میں بنے گا: جہانگیر ترین

بلاول نے کہا کہ پیپلزپارٹی نے جنوبی پنجاب کے معاملے کو اہمیت دلائی ، پیپلز پارٹی نے پنجاب اسمبلی اور سینیٹ سے جنوبی پنجاب صوبے کی قرارداد منظور کرائی تھی۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎