اختر مینگل کے بعد ایک اور اتحادی جماعت تحرک انصاف کی حکومت سے ناراض ہوگئی

 بی اے پی رہنماؤں کا موقف ہے کہ مرکز ی حکومت کے اتحادی رہیں گے بلوچستان کو نظر انداز نہیں ہونے دیں گے.


بلوچستان عوامی پارٹی نے صوبے کو نظر انداز کرنے پر تحفظات کا اظہار کردیا ۔بی اے پی کے سینیٹرز اور ارکان قومی اسمبلی کا اسلام آباد میں مشترکہ اجلاس منعقد ہوا ہے ۔ جس میں سینٹرز انوار الحق کاکڑ سرفراز بگٹی خالد مگسی اسرار ترین اور دیگر شریک ہوئے ۔ میڈیارپورٹس کے مطابق اجلاس میں مرکز کی جانب سے بلوچستان کو نظر انداز کرنے تحفظات کا اظہار کیا گیا اور مطالبہ کیا گیا کہ مرکزی حکومت بلوچستان سے متعلق پالیسیوں کاازسر نو جائزہ لے۔

اجلاس میںبلوچستان کے معاملات پر مختلف سیاسی جماعتوں سے رابطوں کے لئے کمیٹی بنانے کا فیصلہ بھی کیا گیا ہے ۔اس حوالے سے وزیر اعلی بلوچستان جام کمال نے 4 رکنی کمیٹی قائم کردی، کمیٹی کی سربراہی خالد مگسی کریں گے،کمیٹی میں سرفراز بگٹی، انوار الحق کاکڑ اور سردار اسرار ترین شامل ہیں۔کمیٹی بلوچستان کے معاملات کے حل کے لیے دیگر جماعتوں سے رابطہ کرے گی ۔ذرائع کے مطابق بی اے پی رہنماؤں کا موقف ہے کہ مرکز ی حکومت کے اتحادی رہیں گے بلوچستان کو نظر انداز نہیں ہونے دیں گے۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎