اعظم سواتی کی اہلیت خطرے میں پڑ گئی۔۔۔ صادق و امین نہ رہے، چیف جسٹس نے بڑا حکم جاری کردیا

اسلام آباد: (دنیا نیوز) آئی جی اسلام آباد تبادلہ کیس میں چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ اعظم سواتی کو باسٹھ ون ایف کے تحت نوٹس کر دیتے ہیں، جو صادق اور امین ہی نہیں وہ کیسے رکن اسمبلی رہ سکتا ہے۔


آئی جی اسلام آباد تبادلہ کیس کی سپریم کورٹ میں سماعت ہوئی۔ چیف جسٹس میاں ثاقب نثار نے کہا غریب لوگوں کو مارا پیٹا گیا، جے آئی ٹی رپورٹ میں آگیا پولیس نے خصوصی برتاؤ کیا، ہم مثال قائم کرنا چاہتے ہیں بڑے آدمی چھوٹوں کو روند نہیں سکتے، یہاں پر سزا بھی ملے گی۔ عدالتی معاون فیصل صدیقی نے عدالت کو بتایا کہ آئی جی کے تبادلے میں اعظم سواتی کا کردار نہیں، تبادلہ اسی دن کیا گیا جب آئی جی نے فون سننے سے انکار کیا۔

وکیل علی ظفر ایڈووکیٹ نے کہا اعظم سواتی نے عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔ جس پر چیف جسٹس نے کہا اعظم سواتی نے صرف وزارت سے استعفیٰ دیا، ابھی بھی وزارت پر اعظم سواتی کا نام چل رہا ہے، وہ لوگ دن گن رہے ہیں، کیا اعظم سواتی رکن اسمبلی رہنے کے اہل ہیں ؟ چیف جسٹس نے استفسار کیا آئی جی صاحب ! آپ نے اب تک کیا کیا، جس پر آئی جی نے کہا اعظم سواتی کے بیٹے، نجیب اللہ، فیض، جہانزیب کیخلاف مقدمہ درج کیا۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎