شہباز شریف کی ضمانت کیلئے درخواست۔۔۔۔عدالتی فیصلہ آنے سے قبل ہی اپوزیشن لیڈرکو اچھی خبر سنادی گئی

شہباز شریف کے وکیل کا کہنا تھا کہ نیب افسران نے صاف پانی کیس میں بلا کر آشیانہ ہاؤسنگ اسکینڈل میں گرفتار کرلیا، اس کیس میں شہباز شریف کا کوئی کردار نہیں، لطیف سنز کا ٹھیکہ قانون کے مطابق منسوخ کیا گیا۔


لاہور کی احتساب عدالت نے قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی درخواست ضمانت پر نیب کو 6 فروری تک جواب داخل کرانے کی مہلت دے دی۔

منگل کے روز لاہور کی احتساب عدالت میں سابق وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کی ضمانت کی درخواست پر سماعت ہوئی۔ اس موقع پر شہباز شریف کے وکیل نے اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ یہ 64 دن ریمانڈ پر رکھ کر وقت مانگ لیتے ہیں، ایسا تو دہشت گردوں کے ساتھ بھی نہیں ہوتا، نیب حکام پھر وقت مانگ رہے ہیں، جو بلا جواز ہے۔

اس موقع پر قومی احتساب بیورو (نیب) کے وکیل نے کہا کہ ابھی مزید دلائل دینے ہیں جس کیلئے وقت درکار ہے۔ جسٹس شہزاد نے ریمارکس دیے کہ وقت کی کیا ضرورت ہے، آج جواب دیں، جو دلائل ہیں، آج ہی نمٹا دیں۔

شہباز شریف کے وکیل نے مزید کہا کہ آشیانہ کے لیے ایک انچ زمین گئی نہ سرکاری خزانہ سے کوئی پیسہ خرچ ہوا۔ اس موقع پر وکیل نے پیراگون کو فائدہ دینے کی بھی تردید کی۔ بعد ازاں دلائل مکمل ہونے پر نیب کے وکیل نے اپنا مؤقف بیان کرنے کے لیے مزید مہلت مانگ لی، جس پر عدالت نے کیس کی مزید کارروائی 6 فروری تک ملتوی کردی۔

سماعت کے موقع پر حمزہ شہباز اور دیگر لیگی راہنما بھی عدالت میں موجود رہے۔ حمزہ شہباز کا کہنا تھا کہ احتساب ضروری ہے لیکن انتقام کی بو نہیں آنی چاہیے۔ حمزہ شہباز نے امید ظاہر کی کہ وہ عدالتوں سے سرخرو ہوں گے کیونکہ ان کا دامن صاف ہے۔

واضح رہے کہ نیب لاہور نے گزشتہ سال 5 اکتوبر کو سابق وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کو صاف پانی کیس میں طلب کیا تھا، تاہم اُن کی پیشی پر انہیں آشیانہ اقبال ہاؤسنگ کیس میں کرپشن کے الزام میں گرفتار کرلیا گیا۔ گرفتاری کے دوسرے روز ہی انہیں احتساب عدالت میں پیش کیا گیا، جہاں جج نجم الحسن نے شہباز شریف کو 10 روزہ جسمانی ریمانڈ پر قومی احتساب بیورو (نیب) کے حوالے کرتے ہوئے سماعت ملتوی کی۔

یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ آشیانہ اقبال ہاؤسنگ اسکیم میں لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے سابق ڈائریکٹر جنرل احد چیمہ اور سابق وزیراعظم نواز شریف کے قریبی ساتھی اور سابق پرنسپل سیکریٹری فواد حسن فواد پہلے ہی گرفتار کیے جاچکے ہیں۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎