پنجاب حکومت پاس یا فیل،سروے میں عوام نے اپنا فیصلہ سنا دیا

 پنجاب کے 48 فیصد عوام نے حکومت کی کارکردگی کو تسلی بخش قرار دیا.


 پاکستان تحریک انصاف کے اقتدار میں آنے کے بعد سے ہی حکومت کو کئی طرح کے اسکینڈلز اور مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ۔

ڈی پی او پاکپتن کا تبادلہ سے لے کر آئی جی اسلام آباد کے تبادلے تک حکومتی نمائندے عدالت کے روبرو بھی پیش ہوئے۔

وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار نے بارہا حکومت کی سادگی پالیسی کی دھجیاں بھی اُڑائیں، اسی وجہ سے ان سب میں پنجاب حکومت اور وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار کو عوام کی جانب سے خاصی تنقید کا سامنا رہا جس کی وجہ سے خیال کیا جا رہا تھا کہ پنجاب حکومت عوام کو مطمئن کرنے اور عوام کی خدمت کرنے میں ناکام ہو گئی ہے لیکن حقیقت اس کے برعکس ہے۔

پنجاب کی 48 فیصد عوام نے صوبائی حکومت کی کارکردگی کو تسلی بخش قرار دے دیا ہے جس کے تحت یہ کہنا غلط نہیں ہو گا کہ اقتدار میں آنے کے تقریباً 5 ماہ بعد ہی صوبائی حکومت عوام کو کافی حد تک مطمئن کرنے میں کامیاب ہو گئی ہے۔

پنجاب کے 48 فیصد عوام نے صوبائی حکومت کی کارکردگی کو تسلی بخش جبکہ 35 فیصد عوام نے صوبائی حکومت کی کارکردگی کو ناقص قرار دیا۔

صوبائی حکومت کی کارکردگی کے حوالے سے کروائے جانے والے اس حالیہ سروے میں 14 فیصد عوام غیر جانبدار رہی ۔ پنجاب حکومت کی کارکردگی کے بارے میں گیلپ پاکستان کی جانب سے کئے جانے والے سروے کے دوران پنجاب کے 48 فیصد عوام نے حکومت کی کارکردگی کو تسلی بخش قرار دیا ہے اسی طرح پورے ملک کے 43 فیصد عوام نے بھی پنجاب حکومت کی کارکردگی کو تسلی بخش قرار دیا ہے ۔ جس سے صاف ظاہر ہے کہ عوام پنجاب میں تبدیلی آنے پر کسی حد تک مطمئن ہے اور صوبائی حکومت کو مزید کام کرنے اور عوام کی خدمت کرنے کا موقع دینا چاہتی ہے۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎