نیب نےن لیگ کے اہم رہنما اورسابق وفاقی وزیر کوگرفتارکرلیا

 آمدن سے زائد اثاثے بنانے کے الزام میں نیب نے مسلم لیگ ن سے تعلق رکھنے والے سابق وفاقی وزیر کامران مائیکل کو گرفتار کرلیا ۔


کامران مائیکل پر بحیثیت وفاقی وزیر اختیارات کے غلط استعمال کا الزام ہے۔

نیب کے مطابق کامران مائیکل پر کراچی پورٹ ٹرسٹ (کے پی ٹی) میں غیر قانونی طور پر 3 کمرشل پلاٹ لینے کا الزام ہے۔

ذرائع کا کہنا ہےکہ کامران مائیکل کو لاہور سے گرفتار کیا گیا۔

ترجمان نیب کا کہنا ہے کہ سابق وفاقی وزیر پورٹ اینڈ شپنگ کامران مائیکل کی گرفتاری کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ان کو کرپشن کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے۔

ترجمان نے بتایا کہ پلاٹوں کے عوض کامران مائیکل نے بھاری رشوت لی اور انہوں نے 2013 میں افسران پر غیرقانونی الاٹمنٹ دینے کیلئے دباؤ ڈالا۔

نیب کا کہنا ہے کہ کامران مائیکل پر اسی طرح کے 16 پلاٹس کے حوالے سے ریفرنس بھی فائل کیا گیا ہے۔

کامران مائیکل کو کل احتساب عدالت کراچی میں ریمانڈ کیلئے پیش کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ کامران مائیکل کے پاس گزشتہ حکومت میں تین مختلف وزارتوں کے قلمدان رہ چکے ہیں۔ نواز شریف کے دور حکومت میں انہیں سب سے پہلے پورٹس اینڈ شپنگ کا وفاقی وزیر بنایا گیا جس کے بعد ان کا 2016 میں قلمدان تبدیل کردیا گیا اور انہیں انسانی حقوق کا وزیر بنادیا گیا۔ نواز شریف کی نا اہلی کے بعد کامران مائیکل کا قلمدان ایک بار پھر تبدیل ہوا اور شاہد خاقان عباسی کی کابینہ میں وہ وزیر شماریات کی ذمہ دارں نبھاتے رہے۔

واضح رہے کہ ن لیگ کے رہنما کامران مائیکل اقلیتوں کی مخصوص نشست پر مارچ 2012 سے تاحال سینیٹر ہیں۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎