دوسرے ٹیسٹ میچ سے قبل پاکستان اور ساؤتھ افریقہ دونوں ٹیموں کو مسائل کا سامنا

پاکستان اور جنوبی افریقہ کے مابین دوسرا ٹیسٹ شروع ہونے سے قبل دونوں ٹیمیں کشمکش میں مبتلا ہیں کہ کس کھلاڑی کو ٹیم میں شامل کیا جائے اور کسے نکالا جائے۔


جنوبی افریقہ نے سینچیورین میں ہونے والا پہلے ٹیسٹ میچ میں چھ وکٹوں سے کامیابی حاصل کی تھی۔ ان کی اس جیت میں گیارہ وکٹیں لے کر مرکزی کردار ڈوئن اولیور نے ادا کیا۔ اولیور کو کھیلنے کا موقع جنوبی افریقہ کے سٹرائیک بالر ورنن فیلینڈر کے زخمی ہونے کے بعد دیا گیا۔

فیلینڈر گزشتہ نو میچوں میں 16 کی اوسط سے 49 وکٹیں لے چکے ہیں ، اس کے علاوہ وہ بولنگ آل راؤنڈر کا کردار بھی ادا کرتے ہیں، انھوں نے پچھلے 21 میچوں میں سات سو سے زیادہ رن بنائے ہیں۔

اس کے علاوہ ساوتھ افریقہ کے دوسر بالر کگیسو ربادا ہیں جو کہ آئی سی سی کی ٹیسٹ رینکنگ میں پہلے نمبر پر ہیں جبکہ جنوبی افریقہ اپنے سب سے سینیئر اور سب سے زیادہ وکٹیں لینے والے بالر ڈیل سٹین کو بھی ڈراپ نہیں کرے گا۔ اولیور کو کھلانے کا واحد طریقہ بیٹسمین تھیونس ڈی برئون کو ڈراپ کرنا ہے۔

دوسرے ٹیسٹ میچ میں جنوبی افریقہ پاکستان کے خلاف سپن بالر بھی کھلانا چاہتا ہے اور یہ ذمہ داری کیشو ماہاراج پوری کریں گے۔ایسے میں جنوبی افریقہ کے پاس ایسی کوئی حقیقی صورتحال نہیں بن رہی جس میں وہ ڈوئن اولیور کو کھلا سکیں۔ جبکہ جنوبی افریقی کپتان فیف ڈو پلیسی پہلے ہی کہہ چکے ہیں کہ فلینڈر دوسرے ٹیسٹ میچ میں اپنے ہوم گراؤنڈ پر 'ضرور کھیلیں گے'۔

لیکن صرف جنوبی افریقہ ہی سیلیکشن کی اس کشمکش میں مبتلا نہیں۔ پاکستان کو بھی کچھ اسی طرح کے مسائل کا سامنہ ہے۔

زخمی بیٹسمین ہارس سہیل بھی دوسرے ٹیسٹ کے لیے فٹ ہوگئے ہیں۔ ان کے جگہ پاکستان نے نوجوان شان مسعود کو موقعہ دیا تھا جنھوں نے دوسری اننگز میں اچھی کارکردگی دکھا کر ٹیم مینیجمنٹ کو مشکل میں ڈال دیا ہے۔

ایسے میں یہ چہ مگوئیاں کی جارہی ہیں کہ آوٹ آف فارم اوپنر بیٹسمین فخر زمان کو ڈراپ کیا جاسکتا ہے اور شان مسعود کو کھلایا جائے گا۔



آپ کیلئے تجویز کردہ خبریں‎‎